وزیراعظم عمران خان کو نوبل انعام دینے کی قرارداد قومی اسمبلی میں جمع2nd March 2019

وزیراعظم نے پاک بھارت کشیدگی کم کرنے کے لیے دانشمندانہ کردار ادا کیا،بھارت کے جنگی جنون سے کروڑوں لوگوں کی زندگیوں کو خطرہ تھا،عمران خان نے انتہائی مہارت سے صورتحال کو امن کی جانب موڑا، قرارداد کا مت

وزیراعظم عمران خان کے بھارتی پائلٹ کو واپس بھجوانے کے فیصلے نے لوگوں کو اتنا زیادہ متاثر کیا کہ دنیا بھر سے انہیں نوبل انعام دینے کیلئے آوازیں اٹھ رہی ہیں۔اسی حوالے سے قومی اسمبلی میں وزیراعظم عمران خان کو نوبل انعام دینے کہ قرارداد جمع ہو گئی۔میڈیا رپورٹس کے مطابق قرارداد وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری کی جانب سے قومی اسمبلی سیکرٹریٹ میں جمع کروائی گئی۔
قرارداد کے متن میں کہا گیا ہے وزیراعظم نے پاک بھارت کشیدگی کم کرنے کے لیے دانشمندانہ کردار ادا کیا،بھارت کے جنگی جنون سے کروڑوں لوگوں کی زندگیوں کو خطرہ تھا۔عمران خان نے مہارت کے ساتھ اس صورتحال کو امن کی جانب موڑا۔واضح رہے وزیراعظم عمران خان کی جانب سے بھارتی پائلٹ کو جذبہ خیرسگالی کے طورپرواپس بھجوانے کے اعلان کے بعد پاکستان میں عمران خان کیلئے امن کا نوبل انعام کا ہیش ٹیگ ٹوئٹر پر ٹاپ ٹرینڈ کررہا ہے جبکہ دنیا بھرسے لوگ وزیراعظم کو نوبل انعام دینے کیلئے آن لائن درخواست کررہے ہیں۔
عمران خان کے لئے امن کے نوبل انعام کی آن لائن درخواست پر اب تک 35 ہزارسے زائد لوگ دستخط کرچکے ہیں۔عمران خان کے امن وامان کے پیغام کی گونج پوری دنیا میں سنائی دے رہی ہے ۔ امریکی اداکار جیریمی مک لیلن نے عمران خان کے اقدام کو سراہتے ہوئے کہا کیا ہم اوباما سے نوبل پرائز واپس لے کرعمران خان کو دے سکتے ہیں عمران خان نے اپنے امن وآشتی کے پیغام سے بھارتیوں کابھی دل جیت لیا ایک بھارتی ٹوئٹرہینڈل سے عمران خان کیلئے نوبل انعام کا مطالبہ کیا گیا اور یہاں تک لکھا گیا کہ میں نے پہلی باراتنا سمجھدار وزیراعظم دیکھا ہے۔
محبت اور امن پھیلانے کے لیے بھارت کی طرف سے پیار۔ شکریہ عمران خان، شکریہ پاکستان۔سوشل میڈیا پرایک تصویرگردش کررہی ہے جو یہ سمجھانے کے لیے کافی ہے کہ عمران خان نے بھارتیوں کے دلوں میں بسیرا کرلیا ۔ تصویرمیں چند بھارتی بچے بھارت کا جھنڈا ہاتھ میں اٹھائے ہیں جبکہ ان کے ہاتھوں میں پلے کارڈزبھی نظرآرہے ہیں جس میں شکریہ عمران خان لکھا ہوا ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *